Markazi Majlis-e-Amla (MMA)

Minutes of Meeting No. 1

(New Delhi, 31 January 2016)

The Markazi Majlis-e-Amla (MMA) of AIMMM held its first meeting of the two-year term on 31st day of January 2016 at the Central Office of AIMMM. The newly elected President Mr Navaid Hamid presided over the proceedings whereas Mr Mujtaba Farooq, Secretary General, conducted the meeting. In the beginning Mufti Ataur Rehman Qasmi recited Sura Al-Asr.

In his inaugural address, Mr Navaid Hamid welcomed the participants and thanked all members. He introduced members of newly elected and nominated members of the MMA and explained the rationale behind selecting seven eminent personalities for the MMA. He said that his effort was to rope in the organizational representatives and star personalities of different sects (Masalik) to make AIMMM more representative and effective.  He informed that Maulana Dr Kalbe Sadiq, Maulana Hafiz Athar Ali, Maulana Yaseen Usmani and Mr E. Ahmad are among the leading personalities of the country who have joined the caravan recently. Mr Hamid stressed that the Mushawarat has been the most important organization of Indian Muslims and it had a superb past. It would be our endeavor to strengthen the federal character of AIMMM by including more organizations and eminent persons in its fold, he said. He emphasized the need to link masses with the activities of Mushawarat and to bring young blood in it and wanted it to be proactive to help protect the Christians, other minorities and downtrodden classes of all religions against the exploitations and atrocities they face and to stand with them for justice

Indicating about the present status of Mushawarat in different parts of the country, he said barring Delhi and in some parts of UP, the AIMMM lacked organizational structure though there existed some individual members and sympathizers in many states. Hence, there was an urgent need to strengthen and expand the organization in other states, he remarked. He recalled that former President of Mushawarat Mr Syed Shahabuddin has created the “Circle of Friends of Mushawarat” to auger financial needs but now there remained hardly five active members in the circle, a situation that demanded to give more attention on organizational and financial matters.

Expressing his concern on the issue of minority character of AMU and JMI, he said that the Mushawarat had played a historical role in the past on these questions and it should play its role in the coming days too. He informed that a meeting of some prominent persons attached with the issues of AMU and JMI had been summoned on 2nd February to draw a preliminary plan of action.

The President also spoke briefly on the draft resolution, especially on the newly promulgated “Ordinance on Enemy Property.” Raja Sahib Mahmoodabad explained the matter in brief.

After President’s address, Mr Mujtaba Farooq, the Secretary General, explained the agenda and told that copy of the agenda was part of the files provided to all members. Before proceeding further, as per the traditions of the Mushawarat, there was a need to condole eminent persons who passed away since the last meeting of the organization.  He said that some more names had been added in the draft resolutions which were already in the file. The names included Maulana Abdul Haleem, Naib Nazim Jamiat Ahle Hadees, eminent Salfi scholar Maulana Ishaq Bhatti, and well known Sunni scholar Maulana Manzoor Ali Khan Qadri of Mumbai. Eminent political leader Mr AB Bardhan and Mr Rohit Vimula, the research scholar of Hyderabad Central University, were also remembered.

The General Secretary informed that Maulana Asghar Ali Imam Mehdi Salfi could not attend the meeting as he was out of the country. Maulana Jalaluddin Umri and Maulana Juned Ahmad Banarsi had also intimated that they were out of station. Maulana Kalbe Sadiq had also expressed his inability because of his pressing engarements.

Presenting the report of last meeting of last term for ratification, Mr Farooq informed the members that the report was without ATR as it was received only a day before from the former President Dr Zafarul Islam Khan. Members unanimously ratified it.

Mr Farooq further elaborated on organizational and financial matters as mentioned by the President in his inaugural remarks. He said that the office bearers during preliminary preparations had suggested some tasks to take in hand. The Mushawarat had to work in different fields which were in priorities of the Muslim community; for example, matters regarding Awqaf, educational and economic issues, safeguard of Muslim youth, etc. Besides these, there was a need to strengthen and streamline the organization, to establishing state units and expansion of central office, he said. For this, the members should constitute various committees and take help from other people and appoint more staff in the light of proposed budget. He went on to say that the AIMMM should also perform some activities as holding of the mandatory Annual General Meeting (AGM), continuous interaction with civil society, dialogue with foreign diplomats and the like.

Discussing the tabled budget, the members were of the view that in comparison to the last year, there was a steep increase in the proposed budget, which should be otherwise gradual. However, some members were of the view that if funds could be collected than this hike in budget was acceptable which would be required to increase the activities. On this note the budget was passed unanimously. However, some members still objected on the expenditure shown on the visits of office bearers. In turn, the office bearers informed that in the past office bearers shared their own expenses and funds would be required for travelling, though the said tradition might be continued as much as possible.

Regarding change in the names of bank accounts, the participants were informed that due to short of time it could not be done by then. The Secretary General said that since the resolution was first to be presented in Markazi Majlis-e-Amla, so that matter was discussed there. It was followed by brief discussion on the suggestions, advises, ideas and feelings of the members. The members then adopted the resolutions presented for their consideration.

Expressing his views, former President, Dr Zafarul Islam Khan, pointed out as follows:

  1. Membership of some office bearers and appointment of some members as office bearers was done before the completion of membership process which was against the constitution.
  2. The names suggested for Vice Presidents do not reflect comprehensive representation of the whole country.
  3. Four members got equal votes for MMA and two of them were selected by draw. The other two should have been included in nominated members.
  4. Inclusion of special invitees in MMA was not desirable.
  5. The post of treasurer was not constitutional and the concerning member should be made Secretary (Finance) instead.
  6. Executive Secretary is not office bearer of the MMA.
  7. Nominating any non-elected member in the MMA or as office-bearer was objectionable for Mr Navaid Hamid in the past. How it has become desirable now?
  8. Raising his point of objection on budget proposal, Dr Zararul Islam Khan pointed out that arrangement for the cleaning office on alternate day already exists. Then, why permanent staff is needed for daily cleaning?
  9. Objecting allocation of Rs. One lakh for furniture he raised the question if it were being imported from USA?
  10. Mufti Ataur Rehman Qasmi objected in the hike of the budget from Rs. 6 lakh to 20 lakh. He was conspicuous that this may cause hardship for the future president in office, as raising such a big amount was not easy.

The members mentioned their efforts and hoped that merger of the two factions of the Mushawarat was good for the AIMMM. They also pointed out that Constitution should be amended as, at present, the President enjoys much power and the body should be made more democratic.

Responding to the points raised by the honorable members, the Secretary General assured: If any mistake had happened, suitable curative steps would be taken accordingly. He said “Treasurer” would be henceforth called “General Secretary (Finance)”. Executive Secretary would not be considered member of MMA. He thanked the members for pointing out the matter regarding nominations and assured that the raised points would be kept in mind in future. On ignoring nomination of two members who had secured equal votes in election, he pointed out that the constitution bars nomination of more than one person from one Member Organization. He also informed that Amir Jamat e Islami Hind has proposed the name of Mr Nusrat Ali in place of Prof. Mohd. Salim Engineer. He said that while nominating vice-presidents, instead of regional representation, it was considered more appropriate to give representation to different Masaliks. He went on to say that special invitees might be selected appropriately according to the need and relevance of issues. On nomination he said this time there were 106 nominations for MMA members’ election. It was difficult to make a choice so some members were nominated from those who could not be elected.

Regarding amendments in the constitution, Mr Farooq informed that besides Mr Ataur Rehman Qasmi, Mr Syed Shahabuddin and Mr AR Agwan also drawn the attention on this matter. A committee was constituted to formulate the proposals, Mr Amanuallah Khan as its convener and Mr Syed Shahabuddin, Dr Zararul Islam Khan and Mr Ejaz Maqbool as members, besides the President and Secretary General as ex-officio members.

Participants of the meeting:

  1. Mr Navaid Hamid, President
  2. Mr Mujtaba Farooq, Secretary General
  3. Mr Amanullah Khan, General Secretary
  4. Mr Ahmad Raza, General Secretary
  5. Mr Syed Samar Hamid, General Secretary
  6. Mr Sheikh Manzoor Ahmad, General Secretary
  7. Mr Sultan Ahmad MP
  8. Mr Syed Shahabuddin
  9. Dr Syed Mehrul Hasan
  10. Dr Zafarul Islam Khan
  11. Dr Syed Farooq
  12. Mr Nusrat Ali
  13. Mr Rasheed Ahmad Khan, Ex IAS
  14. Humayoon Murad
  15. Mr Munir Ahmad
  16. Mr Hafiz Syed Athar Ali
  17. Mr Taj Mohammad Khan
  18. Mr Aariz Mohammad
  19. Mr Malikul Aziz
  20. Mr Mufti Ataur Rehman Qasmi
  21. Mr Prof Hakeem ZillurRehman
  22. Mr Masoom Moradabdi
  23. Mrs Uzma Naheed
  24. Mr Zubair Jabbar Goplain
  25. Mr Hafiz Rasheed Ahmad Chaudhry
  26. Mr Khawaja M. Shahid, Ex IAS

 

آل انڈیا مسلم مجلس مشاورت کی مجلس عاملہ کی روئیداد

منعقدہ نئی دہلی ،۳۱ جنوری ۲۰۱۶ ؁

نئی دہلی، ۱ ۳جنوری ۲۰۱۶ ؁کو مشاورت کی میقات جنوری ۲۰۱۶ تا دسمر ۲۰۱۷ کی پہلی مرکزی مجلس عاملہ کی مٹینگ دفتر مشاورت نئی دہلی میں منعقد ہوئی۔نشست کی صدارت نوید حامد صاحب نے کی۔ آغاز میں مفتی عطاء الرحمٰن قاسمی نے سورہ عصرکی تلاوت کی ۔ پروگرام کی نظامت سکریٹری جنرل ، مجتبیٰ فاروق صاحب نے کی۔ صدر مشاورت نے افتتاحی گفتگو میں شرکاء کا استقبال کرتے ہوئے سبھی کا شکریہ ادا کیااور اپنی مجلس عاملہ کے لئے عہدیداران کا تقرر اور تعارف کروایانیز نامزد ممبران عاملہ میں سے ۷ ممبران کی نامزدگی کی وجوہات اور ان کا تعارف کرتے ہوئے بتایا کہ ان کی کوشش ہے کہ مختلف مسالک کے نمایاں ذمہ داران اور اہم تنظیموں کی شمولیت کو موثر بنائیں۔ جو اہم افراد شریک قافلہ ہوئے ہیں ان میں مولانا کلب صادق ، مولانا حافظ اطہر علی ، مولانا یٰسن عثمانی ، مسلم لیگ سے ای احمدایم پی وغیرہ مشتمل ہیں۔ عہدیداران اور مجلس عاملہ کی فہرست سبھی کو دی گئی۔جناب نوید حامد نے کہا کہ مشاورت ملت کا ایک اہم ترین پلیٹ فارم ہے، اس کا شاندار ماضی ہے، ہماری کوشش ہو گی کہ ہم مشاورت کی وفاقی شناخت کو مضبوط کریں اور تنظیموں ، جماعتوں ، اداروں اور اہم و نمایاں افراد کی شمولیت کو بڑھائیں ، سول سوسائٹی سے بھی مشاورت کو متعارف کرائیں اور ملت کے نوجوانوں کو بھی اس میں جوڑیں ۔ ملک میں دلتوں اور عیسائیوں پر جو مظالم ہو رہے ہیں اس کو روکنے اور ان کو انصاف دلانے میں ان کا ساتھ دیں۔

صدر مشاورت نے بتایا کہ مشاورت کی موجودہ صورت حال میں مرکزی تنظیم کے علاوہ دہلی اور کچھ اترپردیش میں سرگرمی ہے ۔ لیکن بقیہ ریاستوں میں مشاورت کے انفرادی وابستگان تو کچھ ہیں لیکن تنظیم کی طرف توجہ دینے کی ضرورت ہے ۔

ماضی میں سید شہاب الدین صاحب نے مشاورت کے اخرجات کے لئے ۳۹ خیر خواہان (Circle of Friends of Mushawarat ) بنائے تھے اب بمشکل ۷ رہ گئے ہیں ہمیں تنظیمی اور مالی امور میں توجہ دینا ہوگا۔

علی گڑہ مسلم یونیورسٹی اور جامعہ ملیہ اسلامیہ کی اقلیتی شناخت کے مسئلہ پر صدر مشاورت نے کہا کہ مشاورت نے ماضی میں ان دانش گاہوں کے لئے تاریخی جدو جہد کی ہے اور کرتی رہے گی۔اس ضمن میں پہلی مٹینگ ۲ فروری کو AMU ور JMI سے متعلق ذمہ داروں کی بلائی گئی ہے جس میں لائحہ عمل کے لئے ابتدائی حکمت عملی تجویز کی جائے گی اور اس کی روشنی میں آئندہ اقدام ہوں گے۔

جناب صدر نے اس مٹینگ میں پیش قراردادوں کی نوعیت پر روشنی ڈالی خصوصاً Enemy Property والے مسئلہ پر راجا محمودآباد صاحب نے کچھ باتیں کیں۔آخر میں صدر مشاورت نے ریاستی ڈھانچوں کی تنظیم و استحکام کے عزم کا اظہار کیا۔

صدر کی گفتگو کے بعد مجتبیٰ فاروق صاحب نے ایجنڈا کی وضاحت کرتے ہوئے کہا کہ تمام شرکاء کی فائلوں میں ایجنڈا سے متعلق تفصیلات شامل ہیں اور کارروائی آگے بڑھانے سے قبل ہم چاہتے ہیں کہ حسب روایت گزشتہ وقفہ میں ملت کے نمایاں افراد کی رحلت پر تعزیتی قرارداد پیش ہوئی اور شرکاء نے مغفرت اور بلندی درجات کی دعا کی ۔کچھ نامون کا اضافہ کیا گیا جن میں جمعیت اہل حدیث کے نائب ناظم مولانا عبدالحلیم ، مشہور سلفی عالم مولانا اسحاق ممبئی اور معروف سنی عالم مولانا منظور علی خان قادری ممئی کے نام تعزیت کے لئے شامل کئے گئے ان کے علاوہ ملک کے معروف سیاسی رہنما اے بی بردھن اور حیدراباد سنٹرل یونیورسٹی کے محقق روہت ویمولا کا بھی تعزیتی تذکرہ کیا گیا۔

اس کے بعد غیر حاضر ارکان عاملہ میں سے مولانا اصغر علی امام مہدی سلفی کے بیرون ملک ہونے اور مولانا کلب صادق کی اداراجاتی مصروفیت کے سبب معذرت اور مولانا سید جلال الدین عمری صاحب و مولانا جنید احمد بنارسی صاحب کے سفر پر ہونے کی اطلاع بطور رخصت قبول کی گئی۔

قرارداد کی کارروائی کو آگے بٖڑھاتے ہوئے مجتبیٰ فاروق صاحب نے بتایا کہ گزشتہ میقات کی آخری مٹینگ کی روئیدادجو ڈاکٹر ٖظفرالاسلام خان سے موصول ہوئی ہے شرکاء نے مطالعہ کے بعد اس کی توثیق کا اظہار کیا۔ روئیداد کل ہی موصول ہوئی تھی اس لئے کوئی ATR ) )عملدرآمد کا معاملہ نہ ہونے کی بات کہی گئی۔

ٌتنظیمی اور مالی امور سے متعلق کچھ باتیں نوید حامد صاحب نے ابتدائی گفتگو میں کہی تھی مزید وضاحت کے تحت مجتبیٰ فاروق صاحب نے بتایا کہ عہدیداران نے ابتدائی تیاری کے تحت جو باتیں تجویز کی ہیں ان میں مشاورت میں مختلف میدانوں میں کام انجام دینے پیش نظر ہیں جو ملت کی ترجیحات میں سے ہیں جیسے اوقاف ، ملت کی تعلیمی و معاشی مسائل ، نوجوانوں کا تحفظ و استحکام وغیرہ نیز مشاورت کو مستحکم اور فعال بنانے کے لئے ریاستی مشاورت کی تشکیل و استحکام کے لئے دفتر مشاورت کو بھی وسعت دینی ہوگی اس کے لئے کمیٹیاں بنا کر مفید اور متعلق افراد سے مدد لی جائے گی اور اسٹاف کا تقرر بھی کرنا ہے جو بجٹ میں اب ہے۔

اس کے علاوہ کچھ سرگرمیاں مشاورت کی ضرورت کے تحت سالانہ انجام دینے ہیں جیسے مشاورت کا سالانہ عمومی اجلاس ، سول سوساءئٹی سے ڈائیلاگ اور بیرون ملک کے سفارت کاروں سے مکالمہ وغیرہ بھی پیش نظر ہے۔اس بجٹ کے بحث میں شرکاء نے حصہ لیتے ہوئے توجہ دلاتے ہوئے کہا کہ بجٹ گزشتہ سال کے مقابلہ بہت زیادہ ہے اور تدریجاًبجٹ بڑھانا چاہئے لیکن دیگر شرکاء نے کہا کہ ذمہ داران اگر فنڈ جمع کر سکتے ہیں تو کریں اور مشاورت کاکام بڑھائیں، ہم بجٹ کو منظوری دیتے ہیں اور شرکاء نے بجٹ کی بھی توثیق کردی البتہ ذمہ داران کے دوروں پر جو بجٹ رکھا گیا تھا وہ مناسب نہیں ہے ۔ ذمہ داران نے کہا کہ ہم اپنے اخراجات خود کرتے ہیں اور آئندہ بھی کوشش ہوگی کہ ذمہ داران وہ اخراجات نہ لیں ۔

بنک اکاؤنٹس کی منتقلی کا کام باقی ہے انشاء اللہ جلد کرلیا جائے گا۔ وقت کی کمی کے پیش نظر سکریٹر جنرل نے کہا کہ قراردادیںResolutions) ( چونکہ مرکزی مجلس میں پیش ہونی ہے اس لئے وہیں گفتگو کر لیں گے۔البتہ بقیہ وقت میں شرکاء کی جانب سے جو احساسات اور تجاویز ہیں ان پر تبادلہ خیال ہواچنانچہ اس کی تائید کی گئی اور قراردادوں کو آگے بڑھادیا گیا۔

اظہار خیال کا آغاز کرتے ہوئے ڈاکٹر ظفرالاسلام خان نے کچھ باتوں کی طرف متوجہ کرتے ہوئے کہا:۔

ٌ۱۔ کچھ عہدیداران کی ممبری اور عہدیداران کا تقرر ممبر سازی سے قبل ہوا ہے۔جو غیر دستوری ہے۔

۲۔ نائب صدر کے لئے جن افراد کا نام آئے ہیں ان میں ہندوستان کی نمائندگی کا پورا لحاظ نہیں ہے۔

۳۔ جن افراد کو نامزد کیا گیا ہے ان میں سے ۴ فراد کو یکساں ووٹ ملے تھے ان میں ۲ قرعہ اندازی میں منتخب ہوئے ۲ باقی رہے ان کی نامزدگی کرنی چاہئے تھی۔

۴۔ مدعوئین خصوصی کو اس طرح عاملہ میں شریک کرنا صحیح نہیں ہے۔

۵۔ خازن کا عہدہ دستوری نہیں ہے، اس کو سکریٹری فائنانس بنانا چاہئے۔

۶۔ ایکزیکیٹیو سکریٹری عاملہ کا عہدیدارنہیں ہوتا۔

۷۔ ہارے ہوئے افراد کو عہدیدار نامزد کرنا یا عاملہ کا ممبر بنانا نوید صاحب کے نزدیک ماضی میں غلط تھا اب کیوں صحیح ہوا؟۔

دوستوں نے دونوں مشاورت کے انضمام میں اپنی کوشش اور مخلصانہ توقعات کا اظہارکیا اور یہ بھی کہا کہ مشاورت کا موجودہ دستور میں بہت زیادہ صدر کو حقوق حاصل ہے، اس کو جمہوری ہونا چاہئے۔

وضاحت: سکریٹری جنرل نے کہا کہ کچھ امور جن کی نشاندہی کی گئی اگر ان میں کچھ کمی رہ گئی تو اصلاح کرنا مناسب ہے مثلاًخازن کو جنرل سکریٹری فائنانس کردیا جائے گا۔ ایکزیکیٹیو سکریٹری عاملہ کے عہدیدار نہیں سمجھے جائیں گے۔ جن کی نامزدگی کا تقرر ہوااس سے متعلق توجہ دہانی کے لئے شکریہ ادا کرتے ہوئے آئندہ خیال رکھنے کی بات ہوئی ۔ جن ۲ افراد کے تقرر کی بات کہی گئی تو جماعتوں سے ایک کی قید دستور نے لگائی ہے اور امیر جماعت نے محمدسلیم صاحب کی بجائے نصرت علی صاحب کا نام دیا ہے۔ نائب صدر کے تمام ہندوستان کے مقابل تنظیموں اور مسالک کا لحاظ مفید سمجھا گیا۔مدعوئین حسب ضرورت بلائے جاسکتے ہیں ۔ رہی بات باہر سے ہوئے افراد کی نامزدگی کی تو اب کی مرتبہ ۱۰۶ افراد الیکشن میں امیدوار بنائے گئے تھے کس کو لیتے اور کس کو چھوڑ دیتے لہٰذا ان ہی میں سے لینا ہوا۔

مجتبیٰ فاروق صاحب نے بتایا کہ عطاء الرحمٰن قاسمی صاحب کے علاوہ سید شہاب الدین صاحب، عبدالرشید اگوان صاحب اور ڈاکٹر انوار نے بھی دستوری ترامیم کی طرف متوجہ کیا اور یہ کام ویسے بھی زیر التوا ہے۔ چنانچہ شرکاء کی رائے کے مطابق دستوری ترمیمات کے لئے ایک کمیٹی امان اللہ خان صاحب کی کنوینر شپ میں بنائی گئی۔ ممبران میں سید شہاب الدین صاحب، ڈاکٹر ظفرالاسلام خان صاحب ، مفتی عطاء الرحمٰن قاسمی صاحب ، اعجاز مقبول ایڈوکیٹ صاحب ہوں گے اور صدر و سکریٹری جنرل بطور ایکس آفیسیو  شریک ہوں گے۔

 

آل انڈیا مسلم مجلس مشاورت کی مرکزی مجلس کی روئیدا د

منعقدہ نئی دہلی ، ۳۱ جنوری ۲۰۱۶ ؁

آج بتاریخ ۳۱جنوری ۲۰۱۶ ؁ دوپہر ۳۰۔۱۲ بجے مرکزی مجلس (مجلس عام) آل انڈیا مسلم مجلس مشاورت کی پہلی مٹینگ (میقات ۲۰۱۶۔۲۰۱۷) دفتر مشاورت دہلی میں منعقد ہوئی ۔ مٹینگ کی صدارت صدر مشاورت نوید حامد صاحب نے کی ۔آغاز مولانا حافظ سید اطہر علی کی تلاوت قرآن کریم سے ہوا۔ الحمد لللہ ملک کی مختلف ریاستوں سے مشاورت کے ممبران شریک ہوئے، ان کی فہرست منسلک ہے۔ غیر حاضر ارکان جن کی اطلاع ملی ان میں اختر حسیں اخترصاحب ، کانپور ، اعجاز احمد اسلم صاحب،دہلی، احمد رشید شیروانی صاحب، مولانا جلال الدین عمری صاحب ، کے ایم عارف الدین صاحب ، کے ایم فصیح الدین صاحب، محمد شفیع مدنی صاحب، مولانا اصغر علی امام مہدی سلفی صاحب، مولانا کلب صادق صاحب اور مولانا جنید احمد بنارسی صاحب شامل ہیں۔

ابتداصدر مشاورت نے اپنی افتتاحی گفتگو میں تمام شرکا ء کا استقبال کرتے ہوئے اللہ کا شکر ادا کیا کہ مشاورت جیسے عظیم پلیٹ فارم کی خدمت کے لئے ہم سب جمع ہوئے ہیں ۔ انہوں نے اپنی نا توانی کا ذکر کرتے ہوئے شرکاء سے درخواست کی کہ اپنے تعاون ، تجاویزسے تقویت پہنچائیں ۔ انہوں نے کہا کہ ان کا عزم ہے کہ مشاورت کی وفاقی شناخت مضبوط ہو اور مختلف مسالک اور تنظیموں کی شرکت کو موثر بنایا جائے اور مولانا کلب صادق صاحب ، مولانا توقیر رضا صاحب ، مولانا حافظ سید اطہر علی صاحب ، مولانا یٰسن عثمانی وغیرہ کی شمولیت کا ذکر کیا۔

صدر مشاورت نویدحامد صاحب نے موجودہ حکومت کے رویہ ، سبرامنیم سوامی کے مساجد سے متعلق فتنہ انگیز بیان ، بابری مسجد، Enemy property سے متعلق آرڈیننس ، علی گڑھ مسلم یونیورسٹی ، جامعہ ملیہ اسلامیہ جیسے مسائل پر احساس رکھتے ہوئے اس عزم کا اظہار کیا کہ مشاورت کی تاریخ رہی ہے کہ اس نے اہم مسئلوں کا حل نکالا ہے اور ملت کی آواز بنی ہے ، کوشش ہوگی کہ مشاورت کا کھویا وقار بحال ہو۔

صدر مشاورت کی گفتگوکے بعد سکریٹری جنرل نے ایجنڈہ کی وضاحت کرتے ہوئے کہا کہ ایجنڈہ کے علاوہ تفصیلات جو عاملہ کی رہی ہیں وہ جملہ ممبران کے فائل میں موجود ہے اسے دیکھ لیں ۔

مجلس عام میں نئی ٹیم کا تعارف ، عہدیداران کا تعارف اور نئے ممبران کے تعارف کروانے کے بعد ، انتظامی ، مالی امور کی وضاحت کی گئی اور کہا کہ حسب ضرورت کمیٹیاں بنائی جائیں گیاور صرف عہدیداران ہی نہیں بلکہ مشاورت کے دیگر موقر ممبران سے استفادہ کیا جائے گا۔مٹینگیں پیشگی طے کی جائے گی تاکہ سبھی کو سہولت ہو۔آئندہ مٹینگ عاملہ ۱۷ اپریل ۲۰۱۶ ؁ احمداباد میں ہوگی اور ۷ ۱ جولائی کو مشترکہ مٹینگ کولکتہ میں ہوگی اور عاملہ کی مٹینگ۶ ۱ اکٹوبر ۲۰۱۶ ؁ کو ممبئی میں ہوگی۔مجتبیٰ فاروق صاحب نے یہ بھی بتایا کہ عاملہ کے فیصلوں میں جہاں بجٹ کو منظوری دی گئی ہے وہیں مشاورت کے دستور کو موثر اور جمہوری بنانے کے لئے ترمیمات کی ضرورت ہے لہٰذا طے پایا کہ ایک کمیٹی دستوری ترمیمات کے لئے ہو۔ امان اللہ خان صاحب اس کے کنوینر بنائے گئے۔سید شہاب الدین صاحب، ڈاکٹر ظفرالاسلام خان صاحب ، مفتی عطاء الرحمٰن صاحب ، ایڈوکیٹ اعجاز مقبول صاحب اس کے ممبران ہوں گے اور صدر اور سکریٹری جنرل اس کےایکس آفیسیو شریک ہوں گے۔

مجتبیٰ فاروق نے سید شہاب الدین صاحب، داکٹر انوارالاسلام اور عبدالرشید اگوان صاحب کی تجاویز اور ان سے متعلق تفصیل سے بھی شرکاء کو واقف کرایا۔

شرکاء نے فائل میں موجود تعزیتی قرارداد کی تائید کی ، دعاء مغفرت کے علاوہ اے بی بردھن اور روہتھ ومولا کی تعزیت بھی کی ۔

یہ بھی نوٹ کیا گیا کہ اب تک کی روایت مسلمانوں تک محدود تھی تو اچھا ہے کہ انسانیت دوست افراد کی تعزیت بھی ہو۔

ایجنڈہ کے تحت سیاسی و دیگر امور سے متعلق جو قراردادیں بنائی گئی تھیں ان سے متعلق کی اصلاحات شرکاء کی رہنمائی کے مطابق کر لی گئیں۔

دیگر امور میں شرکاء نے جن امور کی طرف متوجہ کیا ان میں عدم دلچسپی کے حامل ارکان ممبران پر کارروائی ، مشاورت کا نوجوان سے رابطہ کا پلیٹ فارم ، ممبر سازی میں عاملہ ، مشاورت عہدیداران کے تقرر ، آسام اور بنگال کے الیکشن کی طرف توجہ کرنا ، مشاورت کی پورے ملک میں توسیع پر توجہ ، مسلکی اختلافات میں کمی کے لئے کوششیں ، سپریم کونسل کو موثر بنانا۔ مشاورت میں جس طرح ماضی میں غیر مسلموں سے رابطہ کو بڑھایا تھا اور خلیج کو پاٹنے کی کوشش کی تھی آج کے دور میں اس کی ضرورت بڑھ جانے کے سبب اس کی دوبارہ ہو تاکہ مسلم اور غیر مسلم کے درمیان رابطہ مضبوط ہو۔

دہشت گردی کے نام پر مسلم نوجوانوں کی گرفتاریوں کے لئے حکومت کی توجہ دہانی ، نئی تعلیمی پالیسی پر نگاہ رکھنا، خواتین میں کام کو مستحکم کرنا، ملت کی تعلیمی ، معاشی زبوں حالی کے ازالہ پر توجہ دینا۔ اردو زبان سے متعلق کی جارہی سازشوں کاا زالہ وغیرہ۔

کچھ اہم تقاضوں کے پیش نظر طے پایا کہ پارلیمانی اجلاس سے قبل ایک مٹینگ ہو اور ضروری امور پر تجزیہ کے بعد مشاورت اپنا موقف طے کرے ، اس کے لئے ایک کمیٹی بنائی جائے گی جس میں خواجہ محمد شاہد صاحب ، ڈاکٹر جاوید جمیل صاحب اور محمد عارض صاحب ہوں گے۔ کنوینر خواجہ محمد شاہد ہوں گے۔

Enemy property :

اس ضمن میں بھی ایک کمیٹی بنائی گئی اس کے کنوینر محترم راجا محموداباد صاحب ہوں گے ، ڈاکٹر سید قاسم رسول الیاس شریک کمیٹی ہوں گے اوردیگر ارکان کمیٹی کو صدر مشاورت نامزد کریں گے اور راجا صاحب آگے کے اقدامات کے تعلق سے رہنمائی فرمائیں گے۔ممبران پارلیمنٹ سے نمائندگی ، دیگر سیاسی پارٹیوں سے نمائندگی وغیرہ امور پر مشاورت کام کریگی۔ علی گڑھ مسلم یونیورسٹی ، جامعہ ملیہ اسلامیہ کے اقلیتی تحفظات کو بہتر خدمات کے لئے مشاورت توجہ دے گی ۔

سکریٹری جنرل نے بتایا کہ ۲ فروری ۲۰۱۶ ؁کو مٹینگ بلائی ہے اور جلد اس کے تدارک کی کوشش کی جائے گی۔

اوقاف اور تعلیمی مسائل کے لئے قیصر شمیم صاحب ، جاوید احمد صاحب اور دیگر پر مشتمل ایک کمیٹی ہوگی نیز جنرل سکریٹریز میں بھی کاموں کی تقسیم ہوئی ۔

جناب امان اللہ خان، تنظیمی امور دیکھیں گے۔ جناب احمد رضا ،جنرل سکریٹری مالی امور ہوں گے ، جناب سید ثمر حامد ، جنرل سکریٹری سے منصوبہ بندی کے ضمن میں تعاون حاصل کیا جائے گا اورجناب شیخ منظور احمد ، جنرل سکریٹری ، میڈیا سے متعلق امور پر نظر رکھیں گے۔

آخر میں شرکاء کا شکریہ ادا کرتے کہا گیا کہ اصلاح طلب امور کی اصلاح اور توجہ طلب امور پر ممکنہ عمل درآمد کے لئے ہم سب مل کر کوشش کریں گے۔

شرکاء اجلاس درج ذیل ہیں :۔

(۱)مجلس عاملہ

جناب نوید حامد، صدر مشاورت جناب مجتبٰی فاروق، سکریٹری جنرل جناب امان اللہ خان، جنرل سکریٹری مسز عظمیٰ ناہید

جناب سید شہاب الدین جناب داکٹر سید مہرالحسن جناب ڈاکٹر ظفرالاسلام خان جناب سلطان احمد ایم پی

جناب نصرت علی جناب رشید احمد خان، سابق آئی اے ایس جناب پروفیسر ہمایوں مراد جناب پروفیسرحکیم سید ظل الرحمٰن

جناب ڈاکٹر سید فاروق جناب حافظ سید اطہر علی جناب تاج محمد خان جناب عارض محمد

جناب ملک العزیز جناب مفتی عطاء الرحمٰن قاسمی جناب معصوم مرادابادی جناب شیخ منظور احمد، جنرل سکریٹری

جناب سید ثمر حامد، سکریٹری جنرل جناب احمد رضا، سکریٹری جنرل جناب زبیر جبارر گوپلانی جناب منیر احمد خان جناب ھافظ رشید احمد چودھری

(۲)مرکزی مجلس

جناب نوید حامد، صدر مشاورت جناب مجتبٰی فاروق، سکریٹری جنرل جناب سید شہاب الدین جناب اعجاز مقبول، ایڈوکیٹ

جناب امان اللہ خان، جنرل سکریٹری جناب محمد شفیع جناب پروفیسر ہمایوں مراد جناب عبدالرشید

جناب ڈاکٹر جاوید جمیل ڈاکٹر انوارالاسلام جناب راجا محمد امیر محمد خان آف محموداباد جناب مولانا سلطان احمد اصلاحی

جناب مفتی عطاء الرحمٰن قاسمی جناب شیخ منظور احمد، جنرل سکریٹری جناب عبدالعزیز سید جناب زبیر جبارر گوپلانی

جناب اقبال حسین جناب الف شکور جناب ڈاکٹر ظفرالاسلام خان جناب عبدالرشیداگوان

جناب ڈاکٹر عقیل سید جناب ڈاکٹر محمد امیر احمدخان آف محموداباد جناب پروفیسر متین احمد صدیق جناب ڈاکٹر ایم آر حق (قیصر شمیم)

جناب عبدالرحمٰن کونڈو جناب پروفیسر وسیم احمد خان جناب ڈاکتر مسعود احمد جناب ڈاکٹر جاوید احمد

جناب پروفیسر ایس ایم یحیٰ جناب نصرت علی جناب پروفیسرحکیم سید ظل الرحمٰن جناب ڈاکٹر محمد یوسف تیزاب والا

جناب محمد احمد جناب ڈاکٹر سید قاسم رسول الیاس جناب معصوم مرادابادی جناب حافظ رشید احمد چودھری

جناب خواجہ محمد شاہد، سابق آئی ایس جناب انیس درانی جناب پروفیسر شکیل احمد جناب محمد انوار

جناب تاج محمد خان جناب پرواز رحمانی جناب ملک العزیز جناب رشید احمد خان، سابق آئی اے ایس

جناب ڈاکٹر عبید اقبال عاصم جناب ڈاکٹر سید مہرالحسن جناب عارض محمد جناب سلطان احمد ایم پی

جناب محمد یوسف حبیب جناب منیر احمد خان جناب ڈاکٹرمحمد شیث تیمی جناب ڈاکٹر سید احمد خان

جناب الحاج عبدالخالق جناب فیروزاحمد ایدوکیٹ جناب فیروز غازی، ایڈوکیٹ جناب ڈاکٹر انوارالحئی لاری

جناب ڈاکٹر سید فاروق جناب ڈاکٹر فیاض قاسمی محترمہ عظمیٰ ناہید صاحبہ جناب محمد وسیم خان

جناب ڈاکٹر تسلیم رحمانی جناب احمد راضا، جنرل سکریٹری

 

 

 

(Visited 10 times, 1 visits today)